Ticker

6/recent/ticker-posts

یوم آزادی پر مضمون | اردو میں 15 اگست کا مضمون کیسے لکھیں - 15 اگست کا مضمون اردو میں

یوم آزادی پر مضمون | اردو میں 15 اگست کا مضمون کیسے لکھیں - 15 اگست کا مضمون اردو میں

یوم آزادی پر مضمون | اردو میں 15 اگست کا مضمون کیسے لکھیں - 15 اگست کا مضمون اردو میں 10 لائنیں

15 اگست پر مضمون:- 15 اگست ہمارے ملک کا ایک قومی تہوار ہے، جسے ہم ہر سال یوم آزادی کے طور پر بڑی شان و شوکت کے ساتھ مناتے ہیں۔ آج کے دن 15 اگست 1947 کو ہمارا ملک 200 سال بعد انگریزوں کی غلامی سے مکمل طور پر آزاد ہوا تھا، جس کی آزادی کے پیچھے ہمارے ملک کے بے شمار آزادی پسندوں کا اہم کردار ہے، جنہوں نے اپنی جان کی پرواہ کیے بغیر اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔ ایسے تمام آزادی پسندوں کی بے لوث حب الوطنی کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ہم اپنے تمام اہل وطن ہر سال ملک کے یوم آزادی کو یاد کرتے ہوئے اپنے قومی پرچم کو انتہائی احترام کے ساتھ سربلند کرتے ہیں اور اسے سکولوں، کالجوں، بینکوں، دفاتر اور بینکوں میں لہرایا جاتا ہے۔

یوم آزادی پر مضمون

15 اگست کو مضمون کیسے لکھیں - اردو میں 15 اگست کا مضمون 10 لائنیں

اس کے ساتھ ساتھ اس دن اسکولوں میں مضمون نویسی، پوسٹر سازی اور تقریری مقابلوں کا انعقاد کرکے بچوں کو جوش و خروش سے حصہ لینے کی ترغیب دی جاتی ہے۔ نیز لوگوں کو یوم آزادی مبارک کے پیغامات، یوم آزادی پر شاعری، یوم آزادی کی قیمتیں، یوم آزادی کے پیغامات، یوم آزادی کے ایس ایم ایس، 15 اگست پر مضمون، 15 اگست کے اقتباسات، یوم آزادی کی ڈرائنگ، 15 اگست کو تقریر، 15 اگست، 15 اگست کا پیغام ہندوستانی فوج کے حوالے، 15 اگست کا پیغام، 15 اگست کی تصویر، یوم آزادی کا پوسٹر، 15 اگست ایس ایم ایس، 15 اگست کی نظم، حب الوطنی کی شاعری، حب الوطنی کے حوالے اور ہندوستانی فوج کی شاعری ایک دوسرے کو بھیجیں جاتے ہیں۔

اس مضمون کے ذریعے، ہم ایسے تمام طلباء کے لیے 15 اگست کے موقع پر ہندی میں ایک زبردست مضمون فراہم کر رہے ہیں تاکہ وہ اپنے اسکولوں میں منعقد ہونے والے مضمون نویسی کے مقابلے کی تیاری میں مدد کر سکیں، جسے آپ اپنا مضمون تیار کرنے کے لیے استعمال کر سکتے ہیں۔

یوم آزادی (15 اگست) پر ایک مضمون کیسے لکھیں

15 اگست 1947 کو ہمارا ملک انگریزوں سے آزاد ہو کر ایک آزاد ملک بنا۔ ہندوستان کو 14 اور 15 کی درمیانی رات کو کئی بغاوتوں کے بعد آزادی ملی۔ ہمیں آزاد ہوئے 76 سال ہو گئے ہیں۔ ہمارا ہندوستان 200 سال تک انگریزوں کے زیر تسلط رہا جس کے بعد ہمارے ملک کی آزادی کے لیے بہت سی جنگیں لڑی گئیں۔ جس میں کئی عظیم انسانوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا اور ہندوستان کو ایک آزاد ملک بنایا۔ اس سال ہم یوم آزادی کی 76 ویں سالگرہ منا رہے ہیں۔

یوم آزادی کے موقع پر پورا ملک ہر سال اس دن کو قومی تہوار کے طور پر پوری خوشی اور جوش و خروش سے مناتا ہے۔ اور ہندوستان کے اسکولوں، کالجوں اور تمام اداروں میں ترنگا لہرایا جاتا ہے۔ اور اس دن بچے ثقافتی پروگراموں میں حصہ لیتے ہیں اور کامیڈی، ڈرامہ، تقریر، رقص وغیرہ جیسے پروگرام منعقد کرتے ہیں۔

15 August Essay In Urdu -1

اس دن ملک کے وزیر اعظم ہندوستان کے دارالحکومت میں لال قلعہ پر پرچم لہراتے ہیں اور اس کے بعد 21 توپوں کی سلامی کے ساتھ قومی ترانہ گایا جاتا ہے۔ اس کے بعد وزیر اعظم لال قلعہ سے پورے ملک سے خطاب کرتے ہیں اور یوم آزادی کے موقع پر بہت سے لوگ اور بچے وہاں موجود ہوتے ہیں۔ یوم آزادی پر ہمارے سپاہی اور این سی سی کیڈٹس پریڈ کرتے ہیں۔ پریڈ، اور مختلف ریاستوں کی جھلکیاں نکالی جاتی ہیں اور بچوں کی طرف سے رنگا رنگ پروگرام پیش کیے جاتے ہیں۔ وزیر اعظم کی طرف سے دی گئی تقریر اور لال قلعہ پر ہونے والے تمام پروگرام براہ راست نشر کیے جاتے ہیں۔ پورا ملک اس تقریر کو اپنے ریڈیو اور ٹیلی ویژن کے ذریعے سنتا ہے۔

ہندوستان کو آزادی دلانے میں کچھ عظیم انسانوں نے اپنا اہم کردار ادا کیا ہے، انہوں نے اپنی جانیں گنوا کر ہمیں ایک آزاد قوم دی ہے۔ ان عظیم مردوں میں سے کچھ کے نام درج ذیل ہیں- بھگت سنگھ، رانی لکشمی بائی، چندر شیکھر آزاد، سبھاش چندر بوس، منگل پانڈے، راج گرو، سکھ دیو، مہاتما گاندھی۔ اس دن عظیم انسانوں کی قربانیوں کو یاد کیا جاتا ہے۔ اور انہیں دل کی گہرائیوں سے خراج عقیدت پیش کیا جاتا ہے۔ اس دن سکولوں میں طلباء میں مٹھائیاں تقسیم کی جاتی ہیں۔ تمام سرکاری دفاتر میں جھنڈے لہرائے جاتے ہیں۔ اس دن ہندوستان میں تمام سرکاری دفاتر میں چھٹی ہوتی ہے۔ یوم آزادی پر تمام ریاستوں کے وزیر اعلیٰ اپنی ریاست میں پرچم لہراتے ہیں۔

یوم آزادی پر اردو میں مضمون

15 اگست کو قومی تہوار کے طور پر پرچم کشائی، پریڈ اور ثقافتی تقریبات کے ساتھ منایا جاتا ہے۔ سکولوں، کالجوں، دفاتر، سوسائٹی کے احاطے، سرکاری اور نجی اداروں کے ذریعے 15 اگست کے مبارک موقع پر تقریبات کا اہتمام کیا جاتا ہے۔ اس دن یوم آزادی ہندوستان کے تمام شہریوں کی طرف سے بڑے جوش و خروش کے ساتھ منایا جاتا ہے، اس دن ہندوستان کے وزیر اعظم لال قلعہ دہلی پر پرچم لہراتے ہیں اور قوم سے خطاب کرتے ہیں۔ دوردرشن پورے پروگرام کو ٹیلی ویژن پر براہ راست نشر کرتا ہے۔

پہلی پرچم کشائی کی تقریب وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے 5 اگست 1947 کو انجام دی تھی۔ یہ دن ہندوستان میں یا بیرون ملک رہنے والے ہر ہندوستانی شہری کے دل میں بہت اہمیت رکھتا ہے کیونکہ برسوں کی جدوجہد کے بعد ہندوستان کو 15 اگست کو آزادی ملی، اس دن ہندوستانی شہریوں کو انگریزوں سے مکمل آزادی ملی اور مکمل خودمختاری ملی۔

سال 2020 میں، 15 اگست کو، ہندوستان میں آزادی کا یہ 74 واں سال منایا جا رہا ہے۔ یہ دن ہمیں آزادی کے متوالوں کی جدوجہد اور آزادی کے حصول میں ان کی قربانیوں کی یاد دلاتا ہے۔ ہمارے ہیروز جس درد کے ساتھ ان مشکل وقتوں سے گزرے وہ ہمیں یاد دلاتا ہے کہ آج ہم جس آزادی سے لطف اندوز ہوئے ہیں وہ لاکھوں لوگوں کا خون بہا کر حاصل کی گئی تھی۔ اس سے ہندوستان کے ہر شہری میں حب الوطنی کا جذبہ بھی بیدار ہوتا ہے۔ اس سے موجودہ نسل اس وقت کے لوگوں کی جدوجہد کو قریب سے سمجھتی ہے اور انہیں ہندوستان کے آزادی پسندوں سے متعارف کراتی ہے۔

یوم آزادی کی اہمیت

15 اگست (یوم آزادی) لوگوں میں حب الوطنی کا جذبہ پیدا کرتا ہے۔ یہ لوگوں کو متحد کرتا ہے اور انہیں یہ محسوس کرتا ہے کہ ہم بہت سی مختلف زبانوں، مذاہب اور ثقافتی اقدار کے ساتھ ایک قوم ہیں۔ تنوع میں اتحاد ہندوستان کا بنیادی جوہر اور طاقت ہے۔ ہمیں دنیا کے سب سے بڑے جمہوری ملک کا حصہ ہونے پر فخر ہے، جہاں اقتدار عام آدمی کے ہاتھ میں ہے۔ ہر سال 15 اگست کو ہم اس دن کو مناتے ہیں جب ہم ایک آزاد قوم بنے تھے، جس کا مطلب ہے کہ ہم خود پر حکمرانی کرنے کے لیے آزاد تھے اور کسی اور کے زیر اقتدار نہیں تھے۔

یوم آزادی کی تاریخ

انگریزوں نے تقریباً 200 سال ہندوستان پر حکومت کی۔ انگریزوں کے دور حکومت میں عوام کی زندگی مشکل تھی۔ ہندوستانیوں کے ساتھ غلاموں جیسا سلوک کیا جاتا تھا اور انہیں ان سے کچھ کہنے کا حق نہیں تھا۔ ہندوستانی حکمران انگریزوں کے ہاتھوں کی کٹھ پتلی بن کر رہ گئے۔ برطانوی کیمپوں میں ہندوستانی فوجیوں کے ساتھ غیر انسانی سلوک کیا گیا اور کسان بھوکے مر رہے تھے کیونکہ وہ فصلیں نہیں اگا سکتے تھے اور انہیں بھاری زمینی ٹیکس ادا کرنا پڑتا تھا۔ آزادی سے قبل انگریزوں نے ہندوستانی شہریوں پر بہت سے مظالم ڈھائے تھے۔ اسے اپنی زندگی گزارنے کی کسی قسم کی آزادی نہیں ملی۔ ہندوستان کی آزادی کے لیے ہمارے آزادی پسندوں کو کئی جدوجہد کا سامنا کرنا پڑا۔

انگریزوں سے آزادی کے لیے ہندوستان کے مشہور لیڈروں اور آزادی پسندوں، خاص طور پر مہاتما گاندھی، بھگت سنگھ، سردار ولبھ بھائی پٹیل، سبھاش چندر بوس، جواہر لعل نہرو، دادا نوروجی، رانی لکشمی بائی، منگل پانڈے وغیرہ نے آزادی کے لیے جدوجہد کی تھی۔ افراد کی طرف سے. ان عظیم لوگوں نے ملک کی آزادی کے لیے اپنی جانیں بھی قربان کیں۔

1619 میں، انگریزوں نے برصغیر پاک و ہند میں اپنی پہلی چوکی انگریزوں کے ذریعے سورت کے شمال مغربی ساحل پر قائم کی۔بمبئی، مدراس اور کولکتہ میں ایسٹ انڈیا کمپنی کے تحت تین مستقل تجارتی مراکز قائم کیے گئے۔ ان اہم علاقوں میں اس کے اثر و رسوخ کی توسیع کو 19ویں صدی کے وسط میں برطانوی حکومت نے مقبولیت بخشی۔ اس کے ساتھ ساتھ ہندوستان، پاکستان اور بنگلہ دیش کے بیشتر علاقوں میں انگریزوں کا راج چلتا تھا۔ برطانوی دور حکومت میں مقامی بادشاہوں سے معاہدے کرکے ہندوستان کے مختلف حصوں کو کنٹرول کرنے کا کام شروع کیا گیا۔ 1857 میں شمالی ہندوستان میں باغی ہندوستانی فوجیوں کے ذریعہ بغاوت کی گئی جس کی رہنمائی برطانوی حکومت نے تمام سیاسی اختیار ایسٹ انڈیا کمپنی سے ولی عہد کو منتقل کرنے کے لیے دی تھی۔

یوم آزادی - ہندوستان کے کچھ تاریخی لمحات

ہندوستان کے کچھ تاریخی لمحات جیسے کہ انگریزوں کا ہندوستان میں آنا، ہندوستان ایک غلام کے طور پر، نیشنل کانگریس پارٹی کا قیام، فرقہ وارانہ فسادات اور ہندوستان کی تقسیم، آزاد ہندوستان اور آزادی کا تہوار وغیرہ۔

انگریز ہندوستان آ رہے ہیں۔

انگریز 17ویں صدی میں ہندوستان آئے۔ وہ کاروبار کرنے کے مقصد سے ہندوستان آئے تھے۔ ان کا بنیادی مقصد ہندوستان میں اپنا کاروبار قائم کرنا تھا۔ آہستہ آہستہ اس نے ہندوستان میں اپنا کاروبار مکمل طور پر قائم کر لیا۔ اور کئی ہندوستانی بادشاہوں کو جنگ میں شکست دے کر ان کے تمام علاقوں پر اپنی حکمرانی قائم کر لی۔ 18ویں صدی تک انگریزوں نے اپنی ایسٹ انڈیا کمپنی کو مکمل طور پر مضبوط کر لیا تھا۔

بھارت بطور غلام

اب تمام ہندوستانی پوری طرح جان چکے تھے کہ وہ سب غلام بن چکے ہیں۔ انگریز ہندوستانیوں کو انگلش اور دوسرے طریقے سکھانے پر مجبور کرتے تھے تاکہ وہ کچھ بھی کر سکیں جو ہندوستانیوں کو سمجھ نہیں آتا تھا، وہ محسوس کرتے تھے کہ وہ ہمیں انگریزی اور دوسرے طریقے سکھانے میں ہماری مدد کر رہے ہیں۔ لیکن ایسا کرتے ہوئے انگریزوں نے ہندوستانیوں پر حکومت کرنا شروع کر دی۔ انگریزوں نے ہندوستانیوں کو نہ صرف جسمانی بلکہ ذہنی طور پر بھی ہراساں کیا۔ اس کے بعد کئی جنگیں بھی ہوئیں۔

نیشنل کانگریس پارٹی کی بنیاد رکھی

نیشنل کانگریس پارٹی دسمبر 1885 میں 64 ممبران کے ساتھ اسی وقت قائم ہوئی جب ملک میں جنگ جیسی صورتحال تھی۔ ملک کے تمام لوگ بڑے جوش و خروش سے اس پارٹی میں شامل ہونے لگے۔ دادا بھائی نوروجی اور اے او ہیوم نے نیشنل کانگریس پارٹی میں اہم کردار ادا کیا۔ بہت سی انقلابی سرگرمیاں شروع کی گئیں۔ اس کے بعد انڈین مسلم لیگ اور بہت سی دوسری قومی جماعتیں قائم ہوئیں۔

فرقہ وارانہ فسادات اور تقسیم ہند

جلیانوالہ باغ کے قتل عام کے بعد انگریزوں نے فرقہ وارانہ فسادات کی سیاست کو تیز کر دیا۔ اس کے بعد 1924 میں کوہاٹ میں خوفناک ہندو مسلم فسادات ہوئے۔ اگست 1947 میں انگریز ہندوستان سے چلے گئے اور اس کے بعد ہندوستان تقسیم ہوگیا۔ اس کے بعد 14 اگست کو تقسیم کے بعد پاکستان بنا اور اس کے بعد شدید فرقہ وارانہ فسادات ہوئے۔ آزادی کے بعد بھی ہندوستان میں ایک مختلف پرتشدد فسادات بھڑک اٹھے۔ جہاں ہندوستانی ملک کی آزادی پر خوش تھے وہیں ان فرقہ وارانہ فسادات نے ہندوستانیوں کی خوشی کے ساتھ ساتھ ملک کی تقسیم کا غم بھی پیدا کر دیا تھا۔

آزاد ہندوستان اور آزادی کا تہوار

ہمیں یہ آزادی اتنی آسانی سے نہیں ملی، اس آزادی کو حاصل کرنے کے لیے ہمارے ملک کے کئی عظیم انقلابیوں نے قربانیاں دی ہیں، کچھ نے پھانسی کی سزا پائی ہے اور کچھ نے آزادی حاصل کرنے کے لیے اپنی جانیں قربان کی ہیں۔

انگریزوں کے ہندوستان چھوڑنے کے بعد ہندوستان 15 اگست 1947 کو مکمل طور پر آزاد ہوا۔ اور یہی وجہ ہے کہ ہندوستان کی آزادی کا جشن منانے کے لیے ہر سال 15 اگست کو یوم آزادی منایا جاتا ہے۔ اسے ہندوستانیوں کا قومی تہوار بھی کہا جاتا ہے۔ پنڈت جواہر لال نہرو ملک کے پہلے وزیر اعظم بنے اور ان کے ذریعے ہی ملک کی آزادی کی خوشی میں دہلی کے لال قلعہ پر آزادی کے بعد پہلی بار پرچم لہرایا گیا۔ اور ملک کو بھی مخاطب کیا گیا۔ اسی طرح ہر سال دہلی کے لال قلعہ پر ملک کے وزیر اعظم کی طرف سے پرچم لہرایا جاتا ہے اور قومی ترانہ گایا جاتا ہے اور ملک کے وزیر اعظم ملک سے خطاب بھی کرتے ہیں۔

نتیجہ
15 اگست (یوم آزادی) پر ہم ان تمام بہادر انقلابیوں کو یاد کرتے ہیں جو ملک کی آزادی کے لیے لڑتے ہوئے شہید ہوئے، جنہوں نے ملک کو آزاد کرانے کے لیے انگریزوں کے مظالم کا سامنا کیا۔ اس دن ہم ان تمام ہیروز کو یاد کرتے ہیں اور ان کی قربانی کو ذہن میں رکھتے ہوئے انہیں خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔ تمام ہندوستانیوں کو پیار سے مل جل کر رہنا چاہیے۔

15 اگست کو اردو میں مضمون - 2

یوم آزادی ہمارے ہندوستان کے قومی تہواروں میں سے ایک ہے، اس دن دارالحکومت دہلی میں قومی سطح پر آزادی کی تقریبات کا اہتمام کیا جاتا ہے، اس دن دہلی کے لال قلعہ پر وزیر اعظم کی طرف سے قومی پرچم لہرایا جاتا ہے، جسے دیکھ کر لاکھوں کی تعداد میں لوگ جمع ہوتے ہیں اور اپنے ہاتھوں میں ترنگا لہراتے ہیں اور قومی ترانہ گانے کے ساتھ ساتھ فوجیوں کی طرف سے عقاب لہرا کر 21 توپوں کی سلامی دی جاتی ہے اور مسلح افواج کی طرف سے پریڈ بھی نکالی جاتی ہے۔ جس میں وزیراعظم عوام سے خطاب کرتے ہوئے اور متحد ہو کر قومی آزادی کو برقرار رکھنے کے لیے تقریریں کر کے تحریک دیتے ہیں۔

اس دن ان تمام ہیروز کو خراج تحسین پیش کیا جاتا ہے جنہوں نے ملک کو برطانوی راج سے آزاد کرایا، ان کی خدمات کو یاد کرتے ہوئے، جو کہ اخبارات کے ذریعے پوری طرح سے نشر کی جاتی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ، ملک کی خوشی، امن اور خوشحالی کی علامت کے طور پر، تمام ریاستوں میں جشن آزادی کے ساتھ قومی گیت گا کر اور رقص کرتے ہوئے اور پرچم لہرا کر اور ترنگا پتنگیں اڑاتے ہوئے ایک دوسرے کو یوم آزادی کی مبارکباد دیتے ہیں۔

ملک کی آزادی میں آزادی پسندوں کا کردار

ہمارے ملک کی آزادی کے لیے آزادی پسندوں کی سخت جدوجہد کے بعد 15 اگست 1947 کی آدھی رات کو پنڈت جواہر لال نہرو نے لال قلعہ پر ملک کو مکمل طور پر آزاد قرار دیا، جس کے بعد ہمارا ملک مکمل طور پر آزاد ہو گیا، جس کی ایک اہم وجہ یہ تھی۔ برطانوی حکومت کی طرف سے اس دن کو ہمارے ملک کے یوم آزادی کے طور پر منتخب کرنے کے بارے میں یہ بھی خیال کیا جاتا ہے کہ اس دن دوسری جنگ عظیم میں جاپان نے مکمل طور پر ہتھیار ڈال دیے تھے اور حکومت کو اپنی فتح کے طور پر منانے کے لیے اس دن کا انتخاب کیا تھا۔ ہماری آزادی کے دن کے طور پر، جس کی وجہ سے ہمارے ملک کے بہت سے آزادی پسندوں جیسے رانی لکشمی بائی، تاتیا ٹوپے، بھگت سنگھ، راج گرو، سکھ دیو، رام پرساد بسمل وغیرہ جیسے عظیم انقلابیوں کے بعد، ہمارا ملک مکمل طور پر آزاد ہو سکا ہے آزاد ملک صرف مہاتما گاندھی، سبھاش چندر بوش، چندر شیکھر آزاد، لالہ لاجپت رائے وغیرہ کی جدوجہد اور قربانیوں سے ہی مل سکتا تھا۔

جب سے ملک مکمل طور پر آزاد ہوا ہے، اس دن کو ہر سال ہمارے ملک میں یوم آزادی کے طور پر منایا جاتا ہے، اس سال بھی 15 اگست 2022 کو ہمارا 76 واں یوم آزادی منایا جائے گا، اس کے لیے وزرائے اعلیٰ، گورنرز کے علاوہ مہمان خصوصی ہوتے ہیں۔ ہر سال منعقد ہونے والے پروگرام میں بھی مدعو کیا جاتا تھا لیکن اس سال 76 ویں یوم آزادی پر ہونے والے پروگرام میں ہمارے ملک کے وزیر اعظم کی جانب سے کیے گئے اعلان میں بتایا گیا کہ اس سال ان تمام کھلاڑیوں کو مدعو کیا گیا جنہوں نے ملک کی نمائندگی کی۔ اولمپک گیمز میں مہمانوں کو بھی بطور مہمان خصوصی مدعو کیا جائے گا اور ان کی محنت کو سراہا جائے گا۔

یوم آزادی اردو میں 10 لائنوں کا مضمون

یوم آزادی ہندوستان کے قومی تہواروں میں سے ایک ہے۔
یہ دن ہر ہندوستانی کے لیے فخر کا دن ہے۔
آج کے دن 15 اگست 1947 کو ہندوستان انگریزوں کی غلامی سے آزاد ہوا۔
15 اگست کو وزیراعظم سب سے پہلے یادگار شہداء پر جاتے ہیں۔

ہر سال یوم آزادی کی تقریبات کے مہمان خصوصی دوسرے ملک سے بلائے جاتے ہیں۔
اس کے بعد وہ لال قلعہ پر پرچم لہراتے ہیں اور پھر ملک کے عوام سے خطاب کرتے ہیں۔
ملک کی آزادی کے لیے بہت سے عظیم آزادی پسندوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا۔
اس دن لال قلعہ پر پریڈ کا اہتمام کیا جاتا ہے۔
15 اگست کو سکولوں میں ٹیبلو نکالی جاتی ہے۔
اس دن پورا ملک جئے ہند، وندے ماترم، بھارت ماتا کی جئے، انقلاب زندہ باد کے نعروں سے گونجتا ہے۔
مضمون 15 اگست - 15 اگست پر بھاشن
15 اگست 2021 کو ہمارے ملک کا کون سا یوم آزادی منایا جائے گا؟

اس سال ہم 15 اگست 2021 کو اپنے ملک کا 76 واں یوم آزادی منائیں گے۔
ہم اس دن کو یوم آزادی کیوں سمجھتے ہیں؟
آج کے دن 15 اگست 1947 کو ہمارے ملک سے انگریزوں کے راج کے خاتمے کے بعد ہمارا ملک انگریزوں کی غلامی سے مکمل طور پر آزاد ہوا تھا جس میں ہمیں یہ آزادی بہت سے لوگوں کی قربانیوں کی بدولت ہی حاصل ہوئی تھی۔ اس کی وجہ سے ملک کے ہیروز۔

یوم آزادی کے موقع پر کیا پروگرام منعقد کیے جاتے ہیں؟
یوم آزادی کے موقع پر ملک بھر کے شہری اس دن کو ایک تہوار کی طرح جوش و خروش سے مناتے ہیں اور اس دن وزیر اعظم لال قلعہ میں قومی ترانہ لہراتے ہیں اور قومی ترانہ گایا جاتا ہے، ساتھ ہی اسکولوں میں ترنگا لہرا کر تقریری اور پوسٹر کے مقابلے بھی بڑی شان و شوکت سے منعقد کیے جاتے ہیں۔

اس سال یوم آزادی پر مہمان کے طور پر کس کو مدعو کیا جائے گا؟
اس سال یوم آزادی پر ہمارے ملک کے ان تمام کھلاڑیوں کو مدعو کیا جائے گا جنہوں نے اس سال کے اولمپک گیمز میں ہمارے ملک کی نمائندگی کی ہے۔

15 اگست کے موقع پر ٹیبلکس کہاں سے نکالے جاتے ہیں؟
15 کے مبارک موقع پر اسکول کے ذریعے ٹیبلو نکالی جاتی ہے۔

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے